tickersبلاگدلچسپ و عجیبعلاقائیکرائم و کورٹس

کراچی میں نو عمر ’ٹِک ٹاکرز‘ گرفتار: ’ملزم نے سنسنی کے لیے گھر کے باہر کھڑے شہری کو گولی ماری‘

کراچی میں سات روز قبل جس واقعے کو ٹارگٹ کلنگ سمجھا گیا تھا اس کے بارے میں اب پولیس کا دعویٰ ہے کہ بعض نو عمر ٹک ٹاکرز نے سنسنی کے لیے یہ واردات کی ہے۔

پولیس کے مطابق 23 دسمبر کی شام چار بجے کے بعد 50 سالہ قمر رضا ملیر کی جعفر طیار سوسائٹی کے غازی چوک پر کھڑے تھے کہ دو موٹر سائیکلوں پر سوار چار افراد ان کے قریب آئے اور ان پر فائر کیا، قمر رضا کو پیٹ میں گولی لگی اور انہیں تشویش ناک حالت میں ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاکر ہلاک ہوگئے۔

سی سی ٹی وی کی مدد سے معلوم ہوا کہ دو موٹر سائیکلوں پر سوار افراد نے فائرنگ کی جس کے بعد اسے ٹارگٹ کلنگ کا نتیجہ قرار دیا گیا تھا لیکن اب پولیس کا دعویٰ ہے کہ نو عمر ٹِک ٹاکرز نے سنسنی کے لیے یہ واردات کی ہے۔

اس واقعے کی تفتیشی افسر انسپیکٹر اسد منگی نے بی بی سی کو بتایا کہ انھوں نے سی سی ٹی وی کی مدد سے دو ملزمان تک رسائی حاصل کر لی ہے جس کے لیے سی سی ٹی وی سے تصاویر حاصل کر کے تھانوں میں تقسیم کی گئیں۔

سنسنی کے لیے واردات

ایس ایس پی ملیر عرفان بہادر کا دعویٰ ہے کہ ملزمان ٹک ٹاکرز ہیں اور ان میں سے ایک ملزم نے ’سنسنی کے لیے‘ گھر کے باہر کھڑے شہری کو گولی ماری جو جان لیوا ثابت ہوئی۔

ملیر پولیس نے دو ملزمان کو گرفتار کرلیا ہے۔ پولیس کے مطابق ملزمان کی عمریں 14 اور 15 سال کے درمیان ہیں۔ پولیس کا دعویٰ ہے کہ ان کے قبضے سے واردات میں استعمال کی گئی موٹر سائیکل اور پستول بھی برآمد کر لیا گیا ہے جس کی فارنزک کرائی جارہی ہے۔

انسپیکٹر اسد منگی کے مطابق پستول ایک ملزم کے کزن کا ہے جس کا لائسنس ابھی تک پیش نہیں کیا گیا۔

تفتیشی افسر کے مطابق دونوں لڑکے طالب علم ہیں اور مڈل کلاس خاندان سے تعلق رکھتے ہیں۔

پولیس کے مطابق گرفتار ملزمان نے مزید دو ساتھیوں کے متعلق بھی معلومات فراہم کی ہیں جن کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جا رہے ہیں۔

مقتول قمر رضا کون تھے

50 سالہ قمر رضا کا تعلق سندھ کے ضلع خیرپور کے علاقے لقمان سے تھا۔ مقتول کی اہلیہ کے بھائی حسین عالم زیدی نے ایف آئی آر میں بتایا ہے کہ قمر رضا خیرپور میں واپڈا میں ملازمت کرتے تھے اور واقعے سے چار روز قبل اپنی پھوپھی کے سوئم کے لیے آئے تھے۔ ان کو کو بازو میں تکلیف تھی جس وجہ سے کالا بورڈ پر نجی ہسپتال میں ان کا چیک اپ کرایا۔

ان کے مطابق قمر رضا اس دن فزیو تھراپی کرانے کے لیے گھر سے بوقت سوا چار بجے ہسپتال کے لیے روانہ ہوئے اور جب غازی چوک پر گاڑی کے انتظار میں کھڑے تھے تو دو موٹر سائیکلوں پر سوار افراد نے پستول سے فانرگ کی اور گولیاں لگنے سے وہ گر گئے جبکہ ملزمان فرار ہوگئے۔

Show More

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close